غریب کسے کہتے ہیں؟

غریب کسے کہتے ہیں؟

brilliant marketing quotes

 

آپ سوچ رہے ہوں گے کہ یہ کیسا سوال ہے ظاہرہے جو انسان روزمرہ کی ضروریات کو

پورا کرنے سے قاصر ہو اس کے گھر کا چولہا ٹھنڈا رہے یعنی وہ فاقوں کی زندگی بسر کر

رہا ہو تو وہ غریب ہے۔ ذرا رکیے اور سوچیے کہ ایک ایسا شخص جو زندگی کی تمام

آسائشوں سے مالامال ہو اس کے پاس گاڑی، بنگلا، بینک بیلنس نیز زندگی میں ہر سہولت میسر

ہومگر جب بات آئے زکوۃ و خیرات کی، کسی مفلس اور بھوکے کی مدد کرنے کی تو وہ

سخاوت اور فیاضی کی بجائے کنجوسی دکھائے ھیلے بہانے کرے تومیری نظر میں وہ

بھی غریب ہے۔

کیونکہ دولت کے انبار لگ جانے سے اندر کی غربت نہیں مٹ سکتی۔ ایسے میں انسان

معاشرے کے لیے ناسور بن جاتا ہے۔ اور کوئی بھی اس سے محبت جیسے جذبات کو منسلک رکھنا مناسب نہیں سمجھتا۔

اب ایک ایسا شخص جس نے خود تو فاقوں کی زندگی گزاری ہو مگر کسی

دوسرے کو بھوک سے تڑپتا اور بلکتا ہوا نہ دیکھ سکے، اس نے نیلے آسمان تلے موسمی

شدتوں کو جھیلا ہو اور وہ کسی کو بے گھر نہ دیکھنا چاہے، ہر روز اپنی خواھشات کا خون

ہوتا دیکھے لیکن کسی اور کے خوابوں کی تکمیل چاہے تو وہ شخص شہنشاہ ہے عظیم ہے

اور قابل رشک ہے۔ جس معاشرے میں ایسے لوگوں کی فراوانی ہو تو وہاں بھوک، افلاس اور بے

چارگی اپنی بسات لپیٹ لیتے ہیں۔

یہی دغا ہے کہ اللہ ہماری اس قوم کو ظاہری اور باطنی غربت سے نجات بخشں دے۔

Share this post

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *